پاناما لیکس پر عدالتی کمیشن قائم، اس لہر کو خوب سمجھتا ہوں‘


Image copyright
پاناما کی ایک لا فرم موساک فونسیکا سے ملنے والی خفیہ دستاویزات میں وزیر اعظم پاکستان کے بچوں کے نام آنے کے بعد میاں نواز شریف نے قوم سے خطاب میں کہا ہے کہ الزامات کی اصل حقیقت کو جاننے کے لیے عدالتی کمیشن تشکیل دینے کا فیصلہ کیا ہے۔
انھوں نے کہا کہ اس عدالتی کمیشن کی سربراہی سپریم کورٹ کے ریٹائرڈ جج کریں گے۔
’جو لوگ مجھ پر اور میرے خاندان پر الزامات لگا رہے ہیں وہ اس کمیشن کے سامنے ثبوت پیش کریں۔‘
ان کا کہنا تھا کہ یہ کمیشن تحقیقات کے بعد فیصلہ دے گا کہ اصل حقیقت کیا ہے۔
وزیرِ اعظم نواز شریف کا کہنا تھا ’میں پہلی بار عوام سے خطاب میں اپنے بارے میں بات کرنا چاہتا ہوں۔ اس کی ضرورت اس لیے پیش آئی کیونکہ کچھ لوگ مجھے اور میرے خاندان والوں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔‘
انھوں نے کہا کہ یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ سالہا سال تک یکطرفہ احتساب کا نشانہ بنایا گیا۔
ان کا کہنا تھا کہ جدہ میں ان کے والد نے سٹیل کی فیکٹری لگائی اور جلا وطنی ختم ہونے کے بعد یہ فیکٹری بیچی جس سے حاصل ہونے والی رقم سے ’میرے بیٹوں نے اس سے کاروبار شروع کیا‘۔
یاد رہے کہ بڑے پیمانے پر خفیہ دستاویزات افشا ہونے سے پتہ چلا ہے کہ دنیا بھر کے چوٹی کے امیر اور طاقتور افراد اپنی دولت کیسے چھپاتے ہیں۔
ان افراد میں کئی ملکوں کے سربراہانِ حکومت اور سیاسی رہنما شامل ہیں۔
یہ دستاویزات پاناما کی ایک لا فرم موساک فونسیکا سے افشا ہوئیں اور ان کی تعداد ایک کروڑ دس لاکھ ہے۔
کمپنی کا کہنا ہے کہ وہ 40 برسوں سے بے داغ طریقے سے کام کر رہی ہے اور اس پر کبھی کسی غلط کام میں ملوث ہونے کا الزام نہیں لگا۔
دستاویزات میں دنیا کے 73 حالیہ یا سابقہ سربراہانِ مملکت، بشمول آمروں، کا ذکر کیا گیا ہے، جن پر اپنے ملکوں کی دولت لوٹنے کا الزام ہے۔
یاد رہے کہ پاکستان کے وفاقی وزیرِ اطلاعات پرویز رشید نے پاناما پیپرز کے ریلیز کے بعد کہا تھا کہ وزیراعظم نواز شریف کے بچے کوئی غیر قانونی کام نہیں کر رہے۔
پاناما پیپرز کے منظر عام پر آنے کے بعد سیاسی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان اور دیگر سیاسی جماعتوں کی جانب سے وزیراعظم نواز شریف اور ان کے خاندان پر تنقید کی گئی تھی۔
وزیرِ اطلاعات نے اسلام آباد میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بتایا کہا کہ ’اب جو پاناما کےڈاکومینٹس سامنے آئے ہیں ان میں نواز شریف صاحب کے نام سے اور شہباز شریف صاحب کے نام سے کسی قسم کی کسی پراپرٹی کے بارے میں، کسی کمپنی کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے۔ جس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ عمران خان کے الزامات غلط تھے۔‘

اشتہار

;
پاناما لیکس پر عدالتی کمیشن قائم، اس لہر کو خوب سمجھتا ہوں‘ پاناما لیکس پر عدالتی کمیشن قائم،  اس لہر کو خوب سمجھتا ہوں‘ Reviewed by Khushab News on 10:59:00 PM Rating: 5

کوئی تبصرے نہیں:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.