چیئرمین دربار سخی معروف خوشاب کے خلاف بڑا اقدام





خوشاب نیوز ڈاٹ کام)سیکرٹری محکمہ اوقاف پنجاب نے خوشاب کے دربار حضرت سخی سید معروف قادری کی کمیٹی کے چیئرمین فیض رسول بلوچ کو فوری طور پر عہدے سے ہٹانے کا نو ٹیفیکیشن جاری جاری کردیا ہے اور انکی جگہ محمد ندیم رحمانی کو چیئرمین کمیٹی دربار حضرت سخی سید معروف نامزد کردیا گیا۔ فیض رسول بلوچ کی برطرفی چند روز قبل انکے ڈیرے پر پولیس چھاپے میں ان سمیت اٹھارہ جواریوں کی جواء کھیلتے ہوئے رنگے ہاتھوں گرفتاری کی وجہ سے بتائی جاتی ہے یاد رہے کہ چند روز قبل خوشاب پولیس نے گزشتہ روز کٹھہ چوک میں جوئے کے اڈے پر چھاپہ مارکر خوشاب شہر کی اہم سیاسی شخصیت سمیت اٹھارہجواری گرفتار کرلیےتھے۔ بتایا جاتاہے کہ گزشتہ بدھ کے روز شام کے وقت ڈی پی او خوشاب فیصل گلزار کی ہدائت پر خوشاب پولیس نے کٹھہ چوک میں بلدیہ خوشاب کے کونسلر و اہم سیاسی شخصیت فیض رسول بلوچ کے چوبارے پر چھاپہ مارا تو وہاں پر جوا ہو رہا تھا جس پرپو پولیس نے فیض رسول بلوچ سمیت اٹھارہ جواریوں کو جوا کھیلتے ہوئے رنگے ہاتھوں گرفتار کرلیا اور داؤ پر لگی ہوئی ساٹھ ہزار روپے سے زائد رقم بھی برامد کرلی یہاں یہ امر قابل ذکر ہے فیض رسول بلوچ مسلم لیگ ن کے سابقہ دور میں بلدیہ خوشاب کے منتخب وائس چیئرمین بھی رہ چکے ہیں تاہم 2013کے عام انتخابات میں وہ مسلم لیگ ن کو خیر باد کہتے ہوئے ٹوانہ گروپ کے حاجی شریف خان بلوچ کے ساتھ شامل ہوگئے تھے اور حالیہ بلدیاتی الیکشن میں بھی وہ آزاد حیثیت سے بلدیہ خوشاب کے کونسلر منتخب ہو ئے ہیں ۔ عوامی و سماجی حلقوں نے رمضان المبار ک کے مہینہ کا بھی خیال نہ کرتے ہوئے جوئے جیسا مکروہ دھندا کرنے پر شدید ناپسندیدگی کااظہار کیا ہے جبکہ پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ فیض رسول بلوچ کے چوبارے پر کافی عرصہ سے جوئے کے دھندے کی اطلاعات مل رہی تھی لیکن سیاسی اثر و رسوخ کی وجہ سے پولیس مستند اطلاع کے انتظار میں تھی تاکہ اس مکروہ دھندے میں ملوث لوگوں کو رنگے ہاتھوں پکڑا جاسکے اور ملزمان کو کوئی گنجائش نہ مل سکے دوسری طرف فیض رسول بلوچ کے قریبی حلقوں کا کہنا ہے کہ یہ ایک سوچی سمجھی سازش ہے اور فیض رسول بلوچ کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا گیا ہے



;
چیئرمین دربار سخی معروف خوشاب کے خلاف بڑا اقدام چیئرمین دربار سخی معروف خوشاب کے خلاف بڑا اقدام Reviewed by Khushab News on 8:04:00 PM Rating: 5

کوئی تبصرے نہیں:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.