نوشہرہ:سستے رمضان بارے بڑا انکشاف ہوگیا





نوشہرہ وادی سُون سے فرحان فاروق اعوان کی رپورٹ

خوشاب نیوز ڈاٹ کام)حکومت پنجاب کی جانب سے لگائے جانے والے سستے رمضان بازار میں غیر معیاری اشیاء فروخت ہونے لگیں شہریوں ملک نواب خان ،محمد بشیر،محمد وسیم ،محمد اخترنے کہا کہ رمضان بازار میں ناقص ،غیر معیاری اور ہلکی کوالٹی کی اشیاء روزمرہ کی فروخت جاری ہے جس سے حکومت کے دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے جبکہ عام مارکیٹ سے سبزیاں ،فروٹ اور اشیائے خوردونوش معیاری اور مناسب قیمت پر دستیاب ہیں تکبیر چوک پر رمضان بازار تحصیل ہسپتال کی دیوار کے ساتھ لگایا گیا ہے جس سے مریضوں کو دشواری کا سامنا ہے اور آئے روز رمضان بازار کو چیک کرنے کے سلسلہ میں ضلع اور پنجاب سطح پر افسران کے آنے سے روڈ سیکیورٹی سخت کردی جاتی ہے راہگیروں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے نہ ہی کوئی متبادل راستہ ہے انہوں نے کہا کہ رمضان بازار کو نئے لاری اڈہ پر منتقل کیا جائے نیا لاری اڈہ عرصہ دراز سے خالی ہے جو اب تک بچوں کا پلے گراؤنڈ یا پھر شہریوں کی نجی تقریبات کے استعمال میں رہتا ہے شہر بھر کی انتظامیہ رمضان بازار پر تعینات ہونے کی وجہ سے تمام دفتری کام ٹھپ ہوکر رہ گئے ہیں اور مین بازار سمیت دیگر دوکانداروں نے اپنی مرضی کے ریٹ مطابق اشیائے خوردونوش فروخت کررہے ہیں پرائس کنٹرول مجسٹریٹ چند دوکانداروں کو چند ہزار روپے جرمانے کرکے اپنا فرض ادا کررہے ہیں دوسرا ٹی ایم اے کے خاکروب رمضان بازار کی صفائی پر لگے ہوئے ہیں اور پورا شہرگندگی کے ڈھیر میں بدل گیا ہے سیوریج کی نالیاں بند ہونے سے گندہ پانی سڑکوں پر پھیل گیا راہگیروں کا گزرنا محال ہوگیا ہے گندگی کے ڈھیر لگنے سے بدبو پھیلی ہوئی ہے جس سے موذی مرض پھیلنے کا خدشہ ہے اورشہر کا حسن ماند پڑگیا ہے ۔

خوشاب نیوز ڈاٹ کام) پرائس کنٹرول مجسٹریٹ نبیلہ ملک نے وادی سون کے مختلف مواضعات میں سبزی ،فروٹ اور کریانہ کی دوکانوں پر اچانک چھاپے ریٹ لسٹ آویزاں نہ کرنے اور گرانفروشوں کو جرمانے کئے تفصیل کے مطابق پرائس کنٹرول مجسٹریٹ نبیلہ ملک نے سوڈھی جیوالی ،نوشہرہ،مردوال،کھبیکی اور احمد آباد کا اچانک دورہ کیا اور گرانفروشی کے مرتکب دوکانداروں کو جرمانے کئے۔
khushabnews
;
نوشہرہ:سستے رمضان بارے بڑا انکشاف ہوگیا نوشہرہ:سستے رمضان بارے بڑا انکشاف ہوگیا Reviewed by Khushab News on 6:39:00 PM Rating: 5

کوئی تبصرے نہیں:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.