غنڈہ گردی کی انوکھی مثال، پولیس کی خاموشی





نوشہرہ وادی سون سے نمائندہ خصوصی فرحان فاروق اعوان کی رپورٹ

خوشاب نیوز ڈاٹ کام)وادی سون کے مرکزی شہر نوشہرہ میں متوسط طبقہ کے لوگوں کی سہولت کیلئے لگائے جانے والے سستے سومواربازار پر سینکڑوں افراد نے دھاوا بول دیا جس سے سستا بازار کے متعدد دوکاندار زخمی ہوگئے اور لاکھوں روپوں مالیت کا سامان لوٹ لیا گیا تفصیل کے مطابق سول اہسپتال کے قریب ہر سوموار کو لگائے جانے والے بازار میں وادی سون بھر سے غریب اور متوسط طبقہ کے لوگ باالخصوص خواتین سستی اشیاء کی خریدداری کیلئے آتی ہیں بازار میں درجنوں دوکانیں اشیائے ضروریہ کی عارضی طور پر سجائی جاتی ہیں آج صبح انجمن تاجران نوشہرہ کے نمائندوں کی قیادت میں بازار پر لاٹھیوں اور سوٹوں سے مسلح سینکڑوں افراد نے سستے بازار پر دھاوا بول دیاجس کے دوران وہاں پر خریدداری کے لئے آئی ہوئی خواتین میں بھگدڑ مچ گئی اور درجنوں خواتین نے بھاگ کر اپنی جان بچائی سستا بازار کے انچارج ملک شاہد محمود نے اپنے ساتھیوں سمیت احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ ہمارے دوکانداروں عبدالرشیدوسیم شیخ ذیشان ممتازسمیت درجنوں افراد کو جس بے دردی سے مارا پیٹا گیا اس غنڈہ گردی کی مثال کہیں نہیں ملتی انہوں نے بتایا کہ ہمارے دوکانداروں کا لاکھوں روپوں کا سامان بھی لوٹ لیا گیا ہم یہ سامان فروخت کرکے اپنے بچوں کا پیٹ پالتے تھے اب ہمارے چولہے ٹھنڈے ہوجائیں گے ہم نے کاروائی کیلئے تھانہ نوشہرہ میں درخواست دے دی ہے صحافیوں نے اس سلسلہ میں تھانہ نوشہرہ کے ایس ایچ او خالد محمود گوندل سے تفصیل معلوم کی تو انہوں نے بتایا کہ انجمن تاجران کی ایک تنظیم جو حال ہی میں معرض وجود میں آئی ہے کہ درمیان معمولی تلخ کلامی ہوئی ہے اس کی ایف آئی آر نہیں بنتی انجمن تاجران کے رہنما اعلی غلام فرید چیگی نے بتایا کہ ہم ہزاروں روپے اپنی دوکانوں کا ماہانہ کرایہ اور ٹیکس ادا کرتے ہیں یہ لوگ باہر سے آکر لاکھوں بغیر ٹیکس ادا کئے بغیر کماکر لے جاتے ہیں ہمارے دوکاندار بے روزگار ہوکر رہ گئے ہیں ہم کسی صورت یہ سستا بازار نہیں چلنے دیں گے۔
khushabnews
;
غنڈہ گردی کی انوکھی مثال، پولیس کی خاموشی غنڈہ گردی کی انوکھی مثال، پولیس کی خاموشی Reviewed by Khushab News on 8:51:00 PM Rating: 5

کوئی تبصرے نہیں:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.