خوشاب کا قابل فخربیٹا



خوبصورت لب و لہجے کے شاعر جناب احمد خیال آجکل روزگار کے سلسلے میں لاہور میں مقیم ہیں مینیجر کی حیثیت سے سیرینا انڈسٹریز (ٹیکسٹائل انڈسڑی) لاہور میں اپنے فرائض انجام دے رہے ہیں
تیرہ جون 1979 کو مُحب پور ضلع خوشاب میں پیدا ہونے والے خوبصورت لب و لہجے کے شاعر جناب احمد خیال آجکل روزگار کے سلسلے میں لاہور میں مقیم ہیں مینیجر کی حیثیت سے سیرینا انڈسٹریز (ٹیکسٹائل انڈسڑی) لاہور میں اپنے فرائض انجام دے رہے ہیں۔ پہلا مجموعہ کلام خاک میں ستارہ (2007) میں منظر۔عام پر آیا جبکہ دوسرا مجموعہ کلام"ستارے آسماں کے پھُول ہیں" کے نام سے زیر طبع ہے۔ 
ان کے کلام سے چند اشعار آپ احباب کی محبتوں کی نظر 

لگتا ہے پُوری قوم گدا گر تھی اس طرف
کھودیں اگر زمین ، تو کاسہ نکلتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو کیا وہ پھُول سا پیکر کبھی اک خواب ہو گا
تو کیا اُس کے لب و رُخسار مٹی میں ملیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے مری قوم چلی آمرے پیچھے پیچھے 
کوئی رستہ بھی تو پانی سے نکل سکتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خالی پڑے ایاغ سے کچھ واسطہ نہیں
میرا بجھے چراغ سے کچھ واسطہ نہیں
کیوں لڑکیوں کو روک رہے ہو سکول سے
کیا تتلیوں کا باغ سے کچھ واسطہ نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماں جی۔اردو ادب کی شہرہ آفاق تحریر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنہری جل پری دیکھی تو پھر پانی میں کودے
وگرنہ ہم تو دریا کے کنارے جا رہے تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ زہر ہے فضاوں میں کہ آدمی کی بات کیا
ہوا کا سانس لینا بھی محال کر دیا گیا 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہلی خوشی کے جام میں غم مت ملائیے
شفاف جل میں آنکھ کا نم مت ملائیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پگڈنڈیاں ہیں سانپ کی صورت میں دور تک
اس راہ پر قدم سے قدم مت ملائیے
اس کا نہیں جواب ، سو آواز و ساز سے
پائل کی وہ سریلی سی چھم مت ملائیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر یہ باغ کی جانب کا دروازہ نہ ہوتا
تو ممکن تھا کہ میں اتنا ترو تازہ نہ ہوتا 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تتلیاں اُڑنے لگیں عالم مدہوشی میں
جانے کیا بات کہی پُھول نے سرگوشی میں
چادرِآب کہاں کوئی بدن ڈھانپتی ہے
جَل پری آج بھی نا کام ہے تن پوشی میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم سامری کے عہد میں زندہ ہیں اس لیے
ہر آدمی کے پاس عصا ہونا چاہئیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں تھوڑا تھوڑا زمین زادوں سے مُختلف ہو تو اس لیے کہ
فلک سے آتے ہوئے کسی اجنبی ستارے پہ رُک گیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ کو مہتاب تہہ آب بلاتا ہے خیال
چاندی رات میں تالاب نہیں دیکھتا میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک طرف چلتی ہے تیغِ گفتگو
اک طرف میری زُباں کے پھول ہیں
تھوڑا تھوڑا غور سے گر دیکھئیے
یہ بھنور آبِ رواں کے پھول ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے کافی دیر تک آنکھوں سے چھُوئی ہے دھنک
اب تو مجھ کو سات رنگے خواب آنے چاہئیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فلک کے رنگ زمیں پر اُتارتا ہوا میں
تمام خلق کو حیرت سے مارتا ہوا میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تتلیاں،پھُول ،ستارے ،نہیں رہتا کچھ بھی
رنج ہوتا ہے جوانی میں قدم رکھتے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شدّت سے ہانپ ہانپ کے مُردہ سی ہو چُکی
وحشت زدہ چراغ سے کھیلی ہوئی ، ہوا 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موجود کے اس جال میں آنے کا نہیں میں
اک بات تو طے ہے کہ زمانے کا نہیں میں
افلاک سے آگے کا علاقہ بھی مجھے دے
اس خاک کی وسعت میں سمانے کا نہیں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے یزیدا،وہی خطبہ جو کہ زینب نے دیا
آج تک ڈال رہا ہے ترے دربار پہ خاک
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
باغباں کی نیند اُڑنے کا زمانہ آچُکا
رنگ سیبوں کا ترے رُخسار جیسا ہو گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب زرد رُتیں ایک کہانی کی طرح ہیں
سرسوں بھی مرے کھیت میں پیلی نہیں ہوتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح کے رنگ اور ہیں شام کے رنگ اور ہیں
چائے کا اپنا لُطف ہے ،جام کے رنگ اور ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھُول پر ہاتھ اٹھایا بھی تو بس چھوُنے تک
اُس کو مارا بھی تو طاقت سے نہیں ماروں گا 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قدو قامت کے سب اسرار کھُلتے جا رہے ہیں
چلو اچھا ہُواکُچھ یار کھلتے جا رہے ہیں

khushabnews
خوشاب کا قابل فخربیٹا خوشاب کا قابل فخربیٹا Reviewed by Khushab News on 9:04:00 AM Rating: 5

No comments:

loading...
Powered by Blogger.